اسم کی اقسام

اردو گرائمر کی اس حصے میں ہم اسم کی تعریف  اور اسم کی اقسام تفصیل سے پڑھیں گے۔ اس بلاگ پوسٹ کو مکمل پڑھنے کے بعد آپ اس قابل ہوجائیں گے کہ آپ اسم کی تعریف، اسم معرفہ، اسم نکرہ، واحد، جمع، مذکر اسم، مونث اسم، اسم جامد، اسم مشتق اور اسم مصدر کو سمجھ سکیں گے۔ 

فہرست

Table of Contents
Ism ki Iqsam
اسم کی اقسام

:اسم کی تعریف

Ism ki Tareef

“وہ کلمہ جو کسی شخص، جگہ، چیز، جانور یا کفیت کو ظاہر کرے اسم کہتے ہیں۔”

مندرجہ ذیل مثالوں پر غور کریں۔

زین بہت محتنی لڑکا ہے۔

رشید کتاب پڑھتا ہے۔

بلال لاہور جاتا ہے۔

ان جملوں میں زین، لڑکا، رشید، کتاب ، بلال اور لاہور اسم کی مثالیں ہیں۔

:اسم کی اہم اقسام

اردو زبان میں اسم کی اہم اقسام یہ ہیں۔

  • الف: اسم بلحاظ معنی 
  • ب: اسم بلحاظ تعداد
  • ج: اسم بلحاظ جنس 
  • د: اسم بلحاظ بناوٹ

:اسم بلحاظ معنیٰ

بلحاظ معنیٰ اسم کی دو اقسام ہیں۔ 

  • ا: اسم معرفہ 
  • ب: اسم نکرہ 

:اسم معرفہ

Ism Marfa

اسم معرفہ اسم کی وہ قسم ہے جو کسی خاص جگہ، خاص چیز یا خاص شخص کا نام ظاہر کرے۔  اس لئے اسم معرفہ کو اسم خاص بھی کہا جاتاہے۔ان مثالوں پر غور کریں۔

قران مجید ایک مقدس کتا ب ہے۔ 

بادشاہی مسجد لاہور میں ہے۔

شاہد افریدی بہت مشہور کھلاڑی ہے۔

علامہ محمد اقبال ہمارا قومی شاعر ہے۔

مندرجہ بالا جملوں میں قران مجید، بادشاہی مسجد، لاہور، شاہد افریدی، اور علامہ محمد اقبال اسم معرفہ کی مثالیں ہیں۔

اسم معرفہ کی اقسام یہ ہیں 

  • ا: اسم علم
  • ب: اسم ضمیر
  • ج: اسم اشارہ
  • د: اسم موصول

یہ بھی پڑھیں: اسم معرفہ کی اقسام تفصیل کےساتھ

:اسم نکرہ

Ism Nakra

اسم نکرہ وہ اسم ہےجو کسی عام شخص، چیز یا جگہ کے نام کو ظاہر کرے۔ مثلاََ 

اُس نے جنگل میں ایک شیر دیکھا تھا۔

یہ شہر بہت خوبصورت ہے۔ 

وہ کرسی پر بیٹھاتمہارا انتظار کر رہاتھا۔ 

یہ لڑکا بہت امیر ہے۔ 

دئے گئے جملوں میں جنگل، شیر، شہر ، کرسی اور لڑکا اسم نکرہ کی مثالیں ہیں۔ اسم نکرہ چونکہ عام اسم کو ظاہر کرتا ہے، اس لئے اس کو اسم عام بھی کہا جاتا ہے۔

اسم نکرہ کی اقسام بلحاظ معنی مندرجہ ذیل ہیں۔ 

یہ بھی پڑھیں: اسم نکرہ کی اقسام

:اسم بلحاظ تعداد

بلحاظ تعداد اسم کی اہم  اقسام مندرجہ ذیل ہیں۔ 

:واحد

Wahid ki Tareef

ایسا اسم جو صرف ایک ذات کے لئے استعمال کیا جائے واحد کہلاتا ہے۔ مثلاََ 

کتاب، میز، دریا، ستارہ، درخت، ڈبہ، لڑکا، چارپائی وغیرہ وغیرہ

:جمع

Jama ki Tareef

جو اسم ایک سے زیادہ تعداد ظاہر کرے”جمع” کہلاتا ہے۔ مثلاََ 

کرسیاں، باغات، اوراق، لڑکے، ڈبے، ستارے وغیرہ وغیرہ

:اسم بلحاظ جنس

بلحاظ جنس اسم کی مندرجہ ذیل اقسام ہیں۔ 

  • ا: مذکر اسم
  • ب: مونث اسم

:مذکر اسم

Ism Muzakkar

وہ اسم جو نر کے لئے استعمال ہوتا ہے، مثلاََ لڑکا، باپ، دادا، بادشاہ، بندر، ہاتھی، مرغ، مرد،گھوڑا، بکرا وغیرہ وغیرہ

:مونث اسم

Ism Munnas

وہ اسم جو مادہ کے لئے استعمال ہوتا ہے۔ مثلاََ لڑکی، ماں، دادی، ملکہ، مرغی، عورت، استانی، نانی، پھوپھی وغیرہ وغیرہ۔

:اسم بلحاظ بناوٹ

بلحاظ بناوٹ اسم کی اقسام مندرجہ ذیل ہیں۔ 

  • ا: جامد
  • ب: مشتق
  • ج: مصدر

:اسم جامد

Ism Jamid

قواعد میں اسم جامد سے مراد وہ اسمیہ کلمہ ہیں، جو نہ خود کسی دوسرے اسم سے بنا ہواور نہ اُس سے مزید کوئی اسم بن سکے، اُسے اسم جامد کہتے ہیں۔ 

گویا اسم جامد ٹھوس الفاظ کی حثیت رکھتے ہیں، کہ اس میں کوئی تبدیلی نہیں ہوتی۔ 

مندرجہ ذیل جملوں پر غور کریں۔ 

زین نے پنکھا خریدا۔

یہ قالین بہت خوب صورت ہے۔

صبر کا پھل میٹھا ہوتا ہے۔ 

مندرجہ بالا جملوں میں پنکھا، قالین، پھل وغیرہ اسم جامد کی مثالیں ہیں۔

:اسم مشتق

Ism Mushtaq

مشتق کا لفظی معنیٰ “نکلی ہوئی چیز” کے ہے۔ قواعد کی رو سے مشتق وہ اسمیہ کلمہ ہے، جو مصدر سے نکلے یا مصدر سے بنایا جائے۔ مثلاََ 

لفظ”لکھنا” مصدر ہے اس سے مندرجہ ذیل مشتق بنتے ہیں۔ 

لکھائی، لکھنے والا، لکھا ہوا وغیرہ 

اس طرح لفظ” سجانا” مصدر ہے اور سجانے والا، سجا ہوا، سجاوٹ وغیرہ مشتق ہیں۔ 

اسم مشتق کی اقسام مندرجہ ذیل ہیں۔ 

  • ا: اسم فاعل 
  • ب: اسم مفعول 
  • ج: اسم حاصل مصدر 
  • د: اسم کفیت 
  • ہ: اسم حالیہ 
  • و: اسم معاوضہ

: اسم مصدر

Ism Masdar

مصدر کے لغوی معنیٰ ” نکلنے کی جگہ” قواعد اردو میں مصدر وہ اسم ہے، جو خود تو کسی سے نہ بنے لیکن اس سے بہت سے اسم، فعل اور صیغے بن جائیں۔ 

اسم مصدر میں کسی کام کا کرنا یا ہونا زمانے کی پابندی کے بغیر پایا جاتا ہے۔ مثلاََ

رمضان کے روزے رکھنا، تمام مسلمانوں پر فرض ہیں۔ 

اس جملے میں ‘رکھنا‘ مصدر ہے۔ اس طرح پڑھنا، رکھنا، کھیلنا، مارنا، پکڑنا وغیرہ وغیرہ سب اسم مصدر ہیں۔ یہ تمام الفاظ کسی کلمے سے نہیں بنے مگر اِن سے بہت سے کلمے بن سکتے ہیں۔ 

مثلاََ پڑھنا سے پڑھ، پڑھنے والا وغیرہ 

لکھنا سے لکھ ،لکھنے والا وغیرہ وغیرہ 

اسم مصد ر کی اقسام مندرجہ ذیل ہیں۔ 

  • ا: مصدر اصلی 
  • ب: مصدر جعلی 
  • ج: مصدر لازم 
  • د: مصدر متعدی

یہ بھی پڑھیں: فعل کی اقسام 

تبصرہ کیجئے

Your email address will not be published. Required fields are marked *